75

موبائل فون صارفین کی تعداد بارہ کروڑاسی لاکھ سےتجاوزکرگئی، پی ٹی اے

ملک میں موبائل ٹیلی فون کےاستعمال میں اضافہ بدستورجاری رواں مالی سال کےپہلےسات ماہ میں ایک کروڑچونتیس لاکھ سے زائد نئےصارفین کا اضافہ جبکہ موبائل فون صارفین کی تعداد بارہ کروڑاسی لاکھ سے تجاوزکرگئی ملک میں فون کے استعمال کی شرح اڑسٹھ فیصد پرپہنچ گئی۔ پی ٹی اے کی طرف سےجاری کردہ اعدادوشمارکےمطابق رواں مالی سال کےجولائی جنوری عرصہ میں موبائل فون صارفین کی تعداد بارہ کروڑاسی لاکھ سےتجاوزکرگئی ہے۔ تیس جون دوہزارپندرہ کوموبائل فون صارفین کی تعداد گیارہ کروڑچھیالیس لاکھ سےزائد تھی رواں مالی سال جولائی تا جنوری کے عرصےمیں تھری جی اور فورجی صارفین کی تعداد دوکروڑسینتالیس لاکھ سےتجاوزکرگئی تیس جون دوہزارپندرہ میں تھری جی اورفور جی صارفین کی تعداد ایک کروڑ پینتیس لاکھ سےزائد تھی رواں مالی سال کےپہلےسات ماہ فون صارفین کے اضافے کے باعث ملک میں فون کےاستعمال کی شرح اڑسٹھ فیصد پرپہنچ گئی جوگذشتہ مالی سال کےاختتام پرتریسٹھ فیصد تھی۔انہوں نے کہا اس وقت دنیا بھر میں داعش کی بربریت کے خلاف آواز بلند کی جا رہی ہے، لیکن خلیجی ممالک ان مسلمان قوتوں کو نیچا دکھانے میں پیش پیش ہیں، جو اسلام کی سربلندی اور بقا کی جنگ لڑ رہے ہیں۔ عالم اسلام پر ان نام نہاد مسلمانوں کی حقیقت آشکار ہوچکی ہے۔ سعودی عرب کا متنازعہ کردار لمحہ فکریہ ہے۔ عالم اسلام کو یہ سوچنا چاہیے کہ آخر سعودی عرب اسرائیل کو مضبوط کرنے کے لئے امت مسلمہ کی غیرت کو داو پر کیوں لگا رہا ہے۔ حزب اللہ اسلامی تعلیمات کی حقیقی پیروکار ہے اور اس نے اپنے عمل سے اسلام کی حقانیت کو ثابت کیا ہے۔ داعش کی طرف سے مسلمانوں کے مقدسات کی بےحرمتی کے خلاف حزب اللہ سب سے بڑی ڈھال ہے۔ حزب اللہ کو دہشت گرد قرار دینا آل سعود کی متعصبانہ سوچ کا نتیجہ ہے۔ سعودی عرب عالم اسلام کا مشاہدہ صیہونی چشمہ پہن کر رہا ہے۔ یہی وجہ ہے کہ اسے مسلمان دہشت گرد اور مسلمانوں کے خون سے ہولی کھیلنے والے امن کے علمبردار دکھائی دے رہے ہیں۔

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں