حکومتی زیادتی نوجوانوں کے ساتھ 12

حکومتی زیادتی نوجوانوں کے ساتھ

بڑی زیادتی کی بات ہے کہ سٹوڈنٹس پہلے ہی بے روزگار ہوتے ہیں۔

اور انھیں مزید کنگلا کرنے کے لیے NTS اور PPSC جیسے ادارے جاب دینے کی غرض سے مزید لوٹ کھسوٹ کرتے ہیں۔
جس جاب کی ایڈ دی جاتی ہے اسکی فیس کم از کم 500 سے 600 تک رکھی جاتی ہے

این ٹی ایس NTS کی دیکھا دیکھی PPSC نے بھی فیسوں میں مزید اضافہ کردیا ہے

400 سے بڑھا کر 600 کردی گئی ہے اور کورئیر کروانے کی غرض سے 100 سے 150 مزید خرچ آجاتا ہے۔
دوسرا ظلم یہ کہ پھر پیپرز دوسرے شہروں میں لیے جاتے ہیں اس صورت میں امیدواران کا پھر 300 سے 500 تک خرچ آجاتا ہے۔
پھر تیسرا ظلم, موبائل یا بیگ جمع کروانے کی صورت میں امیدواران سے 30 سے لے کر 50 روپے تک ہتھیائے جاتے ہیں جو ٹیسٹنگ ایجنسی اور متعلقہ سکول کا عملہ آپس میں بندر بانٹ کرتا ہے۔
یہ تو مرے ہووں کو مزید مارنے کے مترادف ہے۔
خدارا اس ظلم کے خلاف ایک آواز بنیے۔
کچھ تجاویز میرے ذہن میں ہیں۔مزید آپ بہتر بنانے میں ساتھ دیجیئے

1. فیس کو مکمل طور پر ختم کیا جائے

کیونکہ ہر سرکاری ادارے کے پاس ریکروٹمنٹ بجٹ ہوتا ہے

اور ہر ادارہ بھرتی کا مکمل خرچ باآسانی اٹھا سکتا ہے۔

لہذا جس ادارے کو ملازمین درکار ہوں وہ سارا بوجھ خود اٹھائے۔ناکہ کمیشن سسٹم کے تحت اس ظلم کاحصہ بنے۔تاکہ بے روزگار امیدواران مزید بوجھ سے بچ سکیں۔

2. اگر فیس کو مکمل طور پر ختم نہیں کیا جاسکتا تو کم سے کم کیا جائے ۔

3.ہر بڑے ڈیوژن میں امتحانی سینٹر بنائے جائیں۔

4. ہر امتحانی سنٹر میں اتھارئیزڈ پروٹیکٹشن مہیا کی جائے تاکہ امیدواران کی قیمتی اشیاء(موبائل وغیرہ) اور سامان کی حفاظت بالامعاوضہ ہوسکے۔

براہ کرم اس معاملے کو سنجیدگی سے لیجیئے اور زیادہ سے زیادہ شئیر کیجیئے۔جزاک اللہ خیر

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں